Tuesday, April 24, 2018

زمیں پوچھتی ہے نمازی کہاں ہیں


محبت کے سجدے

وہ دھوپوں میں تپتی زمینوں پہ سجدے
سفر میں وہ گھوڑوں کی زینوں پہ سجدے
چٹانوں کی اونچی جبینوں پہ سجدے
وہ صحرا بیاباں کے سینوں پہ سجدے
علالت میں سجدے مصیبت میں سجدے
وہ فاقوں میں حاجت میں غربت میں سجدے

وہ جنگوں جدل میں حراست میں سجدے
لگا تیر زخموں کی حالت میں سجدے
وہ غاروں کی وحشت میں پُر نور سجدے
وہ خنجر کے ساۓ میں مسرور سجدے
وہ راتوں میں خلوت سے مامور سجدے
وہ لمبی رکعتوں سے مسحور سجدے


وہ سجدے محافظ مدد گار سجدے
غموں کے مقابل عطردار سجدے
نجات اور بخشش کے سالار سجدے
جھکا سر تو بنتے تھے تلوار سجدے
وہ سجدوں کے شوقین غازی کہاں ہیں؟ ؟
زمیں پوچھتی ہے نمازی کہاں ہیں؟؟؟؟





ہمارے بجھے دل سے بیزار سجدے

خیالوں میں الجھے ہوے چار سجدے

مصلے ہیں ریشم کے بیمار سجدے

چمکتی دیواروں میں لاچار سجدے

ریا کار سجدے ہیں، نادار سجدے ہیں،

بے نور، بے ذوق ، مردار سجدے

سروں کے ستم سے ہیں سنگسار سجدے

دلوں کی نحوست سے مسمار سجدے

ہیں مفرور سجدے ہیں مغرور سجدے

کمزور ، بے جان ،معذور سجدے

گناہوں کی چکی میں ہیں چُور سجدے

گھسیٹے غلاموں سے مجبور سجدے

کہ سجدوں میں سر ہیں بھٹکتے ہیں سجدے

سراسر سروں پر لٹکتے ہیں سجدے

نگاہ خضوع میں کھٹکتے ہیں سجدے

دعاؤں سے دامن جھٹکتے ہیں سجدے

وہ سجدوں کے شوقین غازی کہاں ہیں؟؟

زمیں پوچھتی ہے نمازی کہاں ہیں؟؟؟؟

چلو آؤ کرتے ہیں توبہ کے سجدے

بہت تشنگی سے توجہ کے سجدے

مسیحا کے آگے مداوا کے سجدے

ندامت سے سر خم شکستہ سجدے

رضا والے سجدے، وفا والے سجدے

عمل کی طرف رہنما والے سجدے

سراپاِ ادب التجا والے سجدے

بہت عاجزی سے حیا والے سجدے

نگاہوں کے دربان رو دار سجدے

وہ چہرے کی زہرہ چمک دار سجدے

سراسر بدل دیں جو کردار سجدے

کہ بن جائیں جینے کے اطوار سجدے

خضوع کی قبا میں یقین والے سجدے

رفا عرش پر ہوں زمیں والے سجدے

لحد کے مکین ہم نشیں والے سجدے

ہو شافع محشر جبین والے سجدے

وہ سجدوں کے شوقین غازی کہاں ہیں ؟؟؟؟
زمیں پوچھتی ہے نمازی کہاں ہیں !!!!

No comments: